گرفتار خواتین

پاکستان پیپلز پارٹی کا احتساب عدالت کے باہر گرفتار خواتین ورکرز کی فوری رہائی کا مطالبہ

اسلام آباد (این این آئی) پاکستان پیپلز پارٹی نے احتساب عدالت کے باہر گرفتار خواتین ورکرز کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہاہے کہ بحیثیت چیئرمین سینیٹ کمیٹی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ اسلام آباد پولیس سے جواب طلب کرونگا، عمران خان نے کہاتھا کنٹینر دونگا پھر ڈرکس بات کا ہے ؟

ہم نے ورکرز کو نہیں بلایا تھا ، حکومت خوف میں مبتلا ہے ،پارلیمنٹ چل رہی ہے ،اصلاحات لا کر بہتر قانون دیا جائے۔پیر کو میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے رحمن ملک نے کہاکہ اسلام آباد کی احتساب عدالت کے باہر جن خواتین ورکرز کو حراست میں لیا فوری رہا کیا جائے۔

رحمان ملک نے کہاکہ روڈ کیوں بند کئے گئے، وکیلوں کو ایک میل عدالت سے دور رکھا گیا،آج انتظامیہ کو کس بات کا ڈر تھا ۔ انہوںنے کہاکہ میں بحیثیت چیئرمین سینیٹ کمیٹی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ اسلام آباد پولیس سے جواب طلب کرونگا۔ انہوںنے کہاکہ عمران خان نے تو کہا تھا کہ کنٹینر دونگا تو آج ڈر کس بات کا۔انہوںنے کہاکہ اگر جج نہ چاہے تو کمرہ عدالت میں نہیں جائیں گے مگر روڈ کیوں بند کئے۔

انہوںنے کہاکہ حکومت خوف میں مبتلا ہے، ہم نے تو ورکرز کو بلایا نہیں تھا۔رحمن ملک نے کہاکہ لیگل نکتہ نظر پر وکیل بتا سکتے ہیں۔ انہوںنے کہاکہ پیپلزپارٹی ورکرز اور پارٹی کی وکٹمائزیشن اچھی نہیں ہے۔ انہوںنے کہاکہ جس انداز سے روڈ کو بلاک کی غلط ہے۔

انہوںنے کہاکہ انتظامات کے لئے کسی بھی شہری کو روکنا درست نہیں، وکیلوں نے بھی عدالت میں روکنے جانے کی شکایت کی ۔ انہوںنے کہاکہ اسکا نوٹس لوں گا جبکہ دس لوگوں کو نہیں آنے دیا گیا۔ انہوںنے کہاکہ ورکرز کو زرداری نے منع کیا تھا اگر ایک دو کارکنان آ گئے ہیں تو گرفتار نہیں کرنا چاہئے تھا۔ انہوںنے کہاکہ بجٹ بہت ہوتے ہیں انتظامیہ کے پاس بندوبست ہونا چاہیے ۔

انہورںنے کہاکہ یہ کیس کراچی سے ٹرانسفر ہوا ہے اس پر پارٹی کے اعتراضات جائز ہیں۔ انہوںنے کہاکہ ساری سڑکیں بند ہیں کیا ہوا ہے کسی نے کیا کیا ہے؟ انہوںنے کہاکہ زرداری عدالت سے بھاگ تو نہیں رہے ہم نے خود طاہر القادری کو قافلے میں آنے دیا تھا۔

انہوںنے کہاکہ ہم احتساب کےلئے تیار ہیں اور نیب اصلاحات کا وقت آ گیا ہے۔ انہوںنے کہاکہ پارلیمنٹ چل رہی ہے اصلاحات لا کر بہتر قانون دیا جائے۔ انہوںنے کہاکہ اگر آج نہ کیا تو لوگ کہیں گے بہت دیر کر دی مہربان آتے آتے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں