گوگل پلس

گوگل پلس صارفین کے لئے بر ی خبر،بڑا فیصلہ آ گیا

ویسے تو موجودہ دور سماجی رابطوں کی ویب سائٹس کا قرار دیا جاتا ہے مگر اس معاملے میں گوگل کافی بدقسمت ثابت ہوا جس کو سوشل نیٹ ورک لوگوں میں مقبولیت حاصل نہیں کرسکا۔

یہی وجہ ہے کہ گزشتہ سال اکتوبر میں گوگل نے اپنے سوشل نیٹ ورک گوگل پلس کی بندش کا اعلان کیا تھا اور اب اس پر عملدرآمد کردیا گیا ہے۔

جی ہاں گوگل پلس کو الوداع کہہ دیں کیونکہ فیس بک اور ٹوئٹر کو ٹکر دینے کی گوگل کی یہ کوشش بھی ناکام ہوگئی ہے اور اس کے اکاﺅنٹس اور پوسٹس کو ڈیلیٹ کردیا گیا ہے۔

31 جنوری کو گوگل نے اعلان کیا تھا کہ 2 اپریل 2019 کے بعد گوگل پلس ختم کردیا جائے گا اور اس کی وجہ اس سوشل نیٹ ورک کا استعمال بہت کم ہونا قرار دیا گیا جبکہ ہیکنگ واقعات بھی اس فیصلے کی وجہ بنے۔

ویسے تو گوگل پلس کی بندش 2 اپریل کو ہوئی مگر رواں سال 4 فروری سے ہی صارفین نئی پروفائلز، پیجز، کمیونٹی اور ایونٹس بنانے سے قاصر ہوگئے تھے۔

اب تمام صارفین کے اکاﺅنٹس ، پیجز اور کمنٹس کو گوگل کی جانب سے ڈیلیٹ کردیا گیا ہے۔

مگر جی سیوٹ صارفین کے لیے گوگل پلس زندہ رہے گا مگر نئے ڈیزائن اور نئے فیچرز کے ساتھ۔

خیال رہے کہ گوگل پلس کو 7 سال قبل جون 2011 میں متعارف کرایا گیا تھا، اس سوشل شیئرنگ پیج کا مقصد فیس بک جیسی ویب سائیٹس کا مقابلہ کرنا تھا۔

اگرچہ گوگل کے یوٹیوب اور جی میل سمیت اس کی سرچ انجن کا کوئی ثانی نہیں، تاہم اس کے ‘گوگل پلس’ نے فیس بک سمیت کسی بھی حریف سوشل شیئرنگ ایپلی کیشن اور ویب سائیٹ کے مقابلے کم شہرت حاصل کی۔

گزشتہ سال مارچ میں یہ خبر سامنے آئی تھی کہ ہیکرز نے گوگل پلس سمیت دیگر گوگل سروسز کے 5 لاکھ صارفین کا ڈیٹا ہیک کرکے ان کی انتہائی حساس معلومات تک رسائی حاصل کرلی۔

گوگل نے ابتدائی طور پر اس خبر سے انکار کیا تھا، لیکن پھر اس کی تصدیق کرتے ہوئے دعویٰ کیا کہ کمپنی نے متاثرہ صارفین کے ڈیٹا کو محفوظ کرلیا اور اب گوگل پلس کو بند کیا جائے گا۔

گوگل نے اپنے بلاگ میں دعویٰ کیا کہ انہوں نے تھرڈ پارٹی کی درجنوں ایپلی کیشنز کی مدد سے صارفین کے ہیک ہونے والے ڈیٹا کو محفوظ کرلیا۔

کمپنی نے اعتراف کیا کہ ہیکرز نے صارفین کے ان باکس سمیت ان کی انتہائی حساس معلومات تک رسائی حاصل کرلی تھی اور ہیک کیے گئے ڈیٹا کو محفوظ بنانے میں کافی مشکلات بھی پیش آئیں۔

گوگل نے یہ بھی تسلیم کیا کہ گوگل پلس کمپنی کی توقعات پر پورا اترنے میں ناکام رہا حالانکہ اس کے لیے کافی کچھ کیا گیا مگر یہ لوگوں کی توجہ حاصل نہیں کرسکا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں