یورپی یونین

امید ہے کہ یورپی یونین چین سکیورٹی کی سوچ کی مزاحمت کرے گی،وانگ وین

بیجنگ (لاہورنامہ) چین کی وزارت خارجہ کے ترجمان وانگ وین بین نے یومیہ پریس کانفرنس میں کہا کہ یہ چین یورپ تعلقات کو فروغ دینایورپ میں بصیرت رکھنے والے لوگوں کی مثبت خواہش کی عکاسی ہے ، اور یہ بھی ظاہر کرتا ہے کہ چین – یورپ تعلقات مضبوط عوامی بنیاد رکھتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ چین اور یورپ شراکت دار ہیں، حریف نہیں۔ چین اور یورپی یونین دونوں عالمی سپلائی چین کے اہم حصے ہیں اور ایک کھلی عالمی معیشت کی تعمیر میں ایک اہم طاقت ہیں۔

جمعہ کے روز ترجمان نے کہا کہ ہم امید کرتے ہیں کہ یورپی یونین عقل کی آواز کو سنے گی، پین پولیٹیکلائزیشن اور پین سکیورٹی کی سوچ کی مزاحمت کرے گی، دیوار اٹھانے کے بجائے دو طرفہ کھلے پن کو برقرار رکھنے، تحفظ پسندی کے بجائے تجارت اور سرمایہ کاری کی آزادی کو فروغ دینے ، دونوں اطراف کے کاروباری اداروں کے لئے منصفانہ، جائز اور غیر امتیازی کاروباری ماحول پیدا کرنے کے لئے چین کے ساتھ مل کر کام کرے گی.

چین-یورپی یونین تعلقات کی صحت مند اور مستحکم ترقی کو فروغ دے گی، اور غیر مستحکم دنیا میں مزید استحکام اور یقین پیدا کرے گی۔ حال ہی میں فرانس میں انسٹی ٹیوٹ جیکس ڈیلرز نے ایک رپورٹ جاری کی ، جس کا ماننا ہے کہ چین کی مدد سے اپنی ترقی حاصل کرنا یورپی یونین کا ناگزیر انتخاب ہے .

اور وہ یورپی فریق سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ “ڈی رسکنگ” کے معاملے پر عقلمندی اختیار کرے ، چین کے بارے میں زیادہ منطقی اور عملی پالیسی پر عمل کرے ، توانائی ، سبز ترقی، سائنس اور ٹیکنالوجی اور دیگر شعبوں میں باہمی فائدہ مند اور عملی تعاون کو مضبوط بنائے۔