گینگ شوانگ

جنوبی بحیرہ چین میں چین کے مفادات ایک طویل تاریخ کے بعد قائم ہوئے ہیں، گینگ شوانگ

اقوام متحدہ (لاہورنامہ)  اقوام متحدہ میں چین کے نائب مستقل مندوب گینگ شوانگ نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی کے 78 ویں اجلاس میں “سمندر اور سمندر کا قانون” کے ایجنڈا آئٹم کے تحت تقریر کی، جس میں جنوبی  بحیرہ چین سے متعلق امور پر متعلقہ ممالک کے غلط بیانات کا سنجیدگی سے جواب دیا گیا۔

بدھ کے روز  گینگ شوانگ نے کہاکہ  بعض ممالک کے نمائندوں نے اپنی تقاریر میں جوبی  بحیرہ چین کے مسئلے کا ذکر کیا۔ اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی  جنوبی بحیرہ چین کے مسئلے پر بات کرنے کے لئے صحیح جگہ نہیں ہے ، لیکن چین کو اس غلط بیان کا سنجیدگی سے جواب دینا چاہئے۔

 گینگ شوانگ نے نشاندہی کی کہ   جنوبی بحیرہ چین میں چین کی علاقائی سالمیت اور بحری حقوق اور مفادات ایک طویل تاریخ کے دوران قائم ہوئے ہیں ، جسے مسلسل چینی حکومتوں نے برقرار رکھا ہے ، اور بین الاقوامی قانون بشمول اقوام متحدہ کے چارٹر اور سمندر کے قانون سے متعلق اقوام متحدہ کے کنونشن کے مطابق ہے۔

چین بین الاقوامی قوانین کے مطابق   جنوبی بحیرہ چین میں تمام ممالک کو حاصل جہاز رانی کی آزادی کا احترام کرتا ہے، لیکن  چین کے اقتدار اعلی اور سلامتی کے مفادات کو نقصان پہنچانے والے کسی بھی ملک کی کاروائی  کی سختی سے مخالفت کرتا ہے۔

 گینگ شوانگ نے کہا کہ حالیہ برسوں میں چین اور آسیان ممالک نے   جنوبی بحیرہ چین میں ضابطہ اخلاق پر مشاورت کو فعال طور پر فروغ دیا ہے اور مرحلہ وار پیش رفت کی ہے۔ چین فلپائن سمیت آسیان ممالک کے ساتھ بات چیت کو مضبوط بنانے، مداخلت کو ترک کرنے ،   جنوبی بحیرہ چین میں فریقین کے طرز عمل سے متعلق اعلامیے پر مکمل اور مؤثر طریقے سے عمل درآمد جاری رکھنے، عملی کوڈ کے جلد طے پانے کو فروغ دینے اور  جنوبیبحیرہ  چین میں مشترکہ طور پر امن و استحکام برقرار رکھنے کے لیے کام کرے گا۔